لا تعلّقی

781E26D1-7775-41E7-ACA8-5D4D72E81A81

اُس شہر سے اب گُزر

نہیں ہوتا

کبھی جہاں آنا جانا

تھا ہمارا اکثر۔۔

کبھی جہاں سُرخ دھُوپ

چومتی تھی بدن سبز چمن کے

اور مُلائم لمس جلتے

بُجھتے رہتے تھے۔۔

اُس شہر سے اب گُزر نہیں ہوتا

جہاں کی صبا میں تھی

خوشبو عِطر سی اور

لبوں کی پیاس پر جوبن

تھا کمال سا

تب گیلی مِٹّی  پڑتی تھی

پھُوار بن کے یوں۔۔۔

اُس شہر سے اب گُزر نہیں ہوتا

کبھی جہاں کے لمحوں سے

جُڑے تھے میری کسک کے

سلسلے اور دل کی سڑک پہ

رفتار رقص کرتی تھی

دھڑکن بن کے۔۔۔

اُس شہر سے اب گُزر نہیں ہوتا

جہاں اُٹھاتے تھے ناز کلیوں کے

گُلشن اور جھُکے جاتے تھے

سَر عشق کے دربار میں۔۔۔

اُس شہر سے اب گُزر نہیں ہوتا

جہاں آنا جانا تھا ہمارا اکثر۔۔۔

2 thoughts on “لا تعلّقی

  1. Dear t i am again starting your sweet poetry in my newspaper just need your approval  Best Regards, Manzoor Hussain Executive EditorDunya International, NY Washington, Tokyo (Japan) Daily Dunya Islamabad (Pakistan) Office – 718-421-1684 Fax – 718-421-0058 Cell -718-509-5522 Visit our website @ www.dunyaintl.com

    Like

    1. Thank you Manzoor Saab. Yes you have my permission. I would love to be part of Dunya newspaper again. Please do let me know when are you starting to? Thank you

      Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s