سِمٹتی دھُوپ

362E97E6-BCE2-4D0E-BF07-99A4D72F8C9D

کبھی زِینت تھی وہ آنکھیں

میرے آئینے کی۔۔۔

خُدا جانے اب کس چہرے

کی دھُوپ سجاتی ہونگی۔۔

کبھی اُس کے خوابوں میں

سچ کروٹ لیتے تھے میری

آغوش کے۔۔۔

خُدا جانے اب کن سرابوں کے

پیچھے بھاگتا ہوگا وہ۔۔

کبھی وہ چونک جاتا تھا

میری اِک صدا پہ۔۔۔

خُدا جانے اب کس پُکار پہ

وہ تِلملا جاتا ہوگا۔۔

کبھی چُھپا لیتا تھا بانہوں

کے مظبُوط دائرے میں مُجھے۔۔۔

خُدا جانے اب کون سی گرفت

اُس کا نشہ پُورا کرتی ہوگی۔۔

کبھی وہ میرے حِصار میں

آنسُو بہاتا تھا۔۔۔

خُدا جانے اب کون اُس کے

جذبات تَر کرتا ہوگا۔۔

کبھی وہ کہتا تھا کہ

مُحبّت ہے اُسے بے پناہ

مجھ سے۔۔۔

خُدا جانے اب کون سا نیا

عشق اُس کی قید میں سزا

کاٹ رہا ہوگا۔۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s