آدھے دن کا سفر

یہ سفر ویسا نہیں کہ چل دِیۓ

اور پلٹ کے دیکھ بھی نہ سکے۔۔

یہ کئی برسوں کی مُسافت ہے جس

پہ پاؤں کبھی تھکتے تو کبھی

ٹوٹتے ہیں ۔۔۔۔

کہِیں پہ ہار جاتی ہے لگن تو کبھی

شکست دیتے ہیں دل جن

کی جھُوٹی وفائیں اور نا قدری میں

چُور جسم بھُول جاتے ہیں اپنی منزل۔۔۔

بھٹکی ہُوئی راہوں کے شاداب بدن

گُمراہ تو کرنا چاہتے ہیں لیکن

اب اُن کا گُزر ہوتا نہیں یہاں کے

در و دیوار کا۔۔۔

نہ چاہتے ہُوۓ بھی غلط موڑ اور

انجان راستے اپنے سے کیوں لگتے

ہیں کبھی؟

یہ سفر یہ راستہ وہ موڑ اجنبی

بھی ہے مگر لگتا دلفریب ہے۔۔۔

سمندر سا جوش چٹانوں سی مظبُوطی

ہو بھی اگر تو منزل پھر بھی آخر

لا پتہ ہی ہے۔۔۔

تب سفر بنتا ہے پُر کشِش اور لاجواب۔۔۔

 

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s