سراب

کر گئی ہیں راتیں کئی
گُناہ یہی سوچ کے ڈرتا
ہے دل کہ اب نہ ہی کوئی
خواب کرے گا دل بدنام اور
نہ ہی بھرے گا دامن اپنا
کانٹوں سے یہ۔۔۔
ہاۓ! مگر کیا کِیجیۓ اِن
بے باک خواہشوں کا جن
کے شاداب بدن بھیس بدل
کر راتوں کو اوڑھ لیتے ہیں
ہِجاب اور کر بیٹھتے ہیں
من مانیاں کئی۔۔۔۔
یہ جھُوٹے رنگ وہ بدصورتی
میں لِپٹےشوخ کفن جن کی
مَیّتوں سے اَتی ہے مِہک جُھلسے
ہُوۓ پھُولوں کی۔۔۔
کیوں وہ اِن کاغذی ورقوں 
میں رنگ بھرنے کی کوشش
میں لگے رہتے ہیں ہر پَل ؟
اُن پیمانوں کے بد مست جام
کر تو دیتے ہیں پیاس ہری 
لیکن چھوڑ جاتے ہیں ایک ہی گھُونٹ 
کے اثر ہونے تک۔۔۔
یہ نشہ یہ پیاس اور وہ
کسک، بس یہی زہر ہے
جس کے نَس نَس میں اُتر
جانے سے فریب کی دُنیا
جنم لیتی ہے۔۔۔
سراب کی دُنیا۔۔۔۔۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s