دردِ مُشترک

چلو پھر پیڑِ راہ گُزر نِصف بانٹ لیں

کُچھ سرُور بقا کا رنج و غم بانٹ لیں

سیاہ رات کے نیم جواں فسانے اور

ماضی کے معصوم ناکردہ گُناہ بانٹ لیں

شمسِ لمس و تپِش میں چُور سُنہری جسم

اِس رنگِ خوشبو میں دُھلے جذبات بانٹ لیں

جو تھی پرائی خوشی منسُوب اُس کے نام سے

وہ مشترکۂِ احساس و شناخت بانٹ لیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s