خوابوں کی شدت

ویسے تو یاد یں ایسے ہیں جیسے پرندوں کے پروں کو چُومتی ہوایئں۔ اِن کے دم سے ہی زندگی کی گردش بڑھتی رہتی ہے۔ کبھی کوئی ایک لمحہ نہیں ایسا جو اُس کی یاد سے خالی جاۓ بھلے وہ پاس نہ بھی ہو۔ اکثر سکون رہتا ہے دل کواور دنیاوی کاموں میں مصروف بھی رہتے ہیں مگر یہ خواب جب کروٹ کا پردہ چاک کر کے چھلانگ لگاتے ہیں تو وجود کے آ ئینے کو پاش پاش کر دیتے ہیں۔ ایسے لگتا ہے کہ وہ یہیں ہو آپ کے سرہانے اور آپ کے بالوں میں ایسے اپنی اُنگلیوں سے خط لکھ رہا ہو جیسے اُس نے اِسی خواب کی کہانی لکھی اور تعبیر کا قلم میرے ہاتھ میں دے دیا ہو۔ درد اور خواب کا رشتہ اُتنا ہی گہرا ہے جتنا چشم کا نمی سے۔

میرے خواب اکثر مجھے جھنجھوڑ دیتے ہیں خاص کر جب کسی کی یاد اور اُس کے سراپاۓ تشنگی سے منصوب ہوں تب میرے سُوکھے ہوۓ شجر کی ڈالیوں پہ بہار آجاتی ہے اور میں پھر سے کِھلنے لگتی ہوں مگر نہیں ؍ ایسا نہیں ہونا چاہیۓ کیونکہ پھر میرا وجود اُنہی خوشبوؤں کا پیچھا کرنے لگ جاتا ہے جہاں کے گُلاب بہت مہنگے ہوں اور وہاں کی منزل اُن سخت راستوں سے گُزر کر مِلتی ہے جہاں پہنچ تو جاتے ہیں مگر وہاں پہنچتے پہنچتے پاؤں میں چھالے اور جسم درد و غم سے نڈھال ہو جاتا ہے۔

آج برسوں بعد اُسے خواب میں دیکھ کر دل آٹھ آٹھ آنسو رویا ٫ ایسا تو تب بھی نہ ہُوا تھا جب اُس کی آواز سُنی میں نے فون پر چند ماہ پہلے۔ محبت خواب اور درد ایسے گہرے رشتے میں بندھے ہیں کہ کبھی پیچھا بھی چھُڑاؤ تو نہیں چھُڑا سکتے۔ آہوں کا شور اُتنا ہی تیز ہے جتنی لہریں مچلتی ہیں سمندر کے عشق میں۔ کبھی کوئی یاد کبھی کوئی کسک اُس کے ساۓ و وجود سے خالی نہیں جاتی۔ وہ ایسے میرے شہر میں سفر کرتا جیسے میرے جسم میں سانسیں ہیں اور وہ اِسی سفر کی منزل ہے جب تک یہ سانسیں ہیں۔

کبھی کوئی جدا بھی ہو تو خواب کے دریچوں سے آتا جاتا رہتا ہے ٹھنڈی ہوا کا جھونکا بن کر۔ یہی تو اصل عشق ہے اِسی میں فلاح اور اِسی میں مُکمل آزادی۔
یہی میرے خوابوں کی شدت ہے اور یہی اِس کی حقیقت۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s