شمعٰ

image

اُس رات جب ہم بیٹھے تھے

نہ جانے کیا بات ہُوئ

کُچھ آہٹ کی آواز ہُوئ

کُچھ کانوں میں سرگوشی تھی

بارِش کی بُوند سے مِہک گئ

شاید کُچھ کِہنے کو ٹِھہر گئ

تُمہاری آنکھ کا وہ سِتارہ

نہ جانے کونسی فضا تَھم گئ

جیسے کوئ دستک دینے لگی

اُٹھو ! ڈُھونڈو اُسے تم

جو ایک نئ روشنی دِکھا تا ہے

جِسکے قدموں میں بارش ہے

اُسکے ہاتھ کی گرمی سے

وہ لمحہ پِگھلتا ہے

کیسے ہم نے دیکھا تھا

جب ایک شمٰع جلائ تھی

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s