ا ٹوُٹ مُحبّت


image

! جُھکی نظروں سے پوچھے کوئی کہ شاموں پہ جوبن کس کا ہے

اُجالوں پہ کبھی سیاہی کی چادریں فریفتہ ہُوئی ہیں کیا؟

! بے داغ چمک سی چَھنتی جا رہی ہے کسی کے حُسنِ نُور سے

ستاروں پہ کبھی آفتاب کی کرنیں فریفتہ ہوئی ہیں کیا؟

! جواں افسانے انوکھے جال میں بندھی گردش کے مُحتاج ہیں

عاشقوں پہ کبھی اَنا کی بارشیں فریفتہ ہوئی ہیں کیا؟

! شمعٰ کی لپیٹ میں کس قدر مدہوش ہوُۓ جاتے ہیں سُرخ گلاب

پروانوں پہ کبھی ہوا کی بدلیاں فریفتہ ہوئی ہیں کیا؟

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s