ہرجائی

image

کیسے بچ سکا ہے زہرِعشق سے آج تک کوئی

باوجُود شِدّت کے بھی دُنیا داری نہیں چھوڑتا

یہ وعدۂِ وفا کے دیتا ہے دلائل بے شُمار اکثر

جنون تو ہے ہی ظالم مصروفیّات نہیں چھوڑتا

کل نہ جانے کس جہاں کی زینت بنے یہ رُوح

بے بسی کی آڑ میں ہرجائی ضِد نہیں چھوڑتا

بے جان جسم کی یاد میں رویا ہے دل اِتنا

دو قدم پیچھےکیا یہ تو شکست کھانا نہیں چھوڑتا

افراتفری کے دَور میں عشق کرنے کی فُرصت کسے

شب و روز کے گُلستان میں کانٹے چُننا نہیں چھوڑتا

صداقت کی چادر میں ہِجاب اوڑھے ہے فریب یُوں

آب و تاب کے چولے میں افسُردگی پہِننا نہیں چھوڑتا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s