تعلّقِ لا تعلّقی

IMG_1665

وہ سمجھ کے پیِتا رہا لہُو آبِ حیات کو

جسم اُس کا تھا رُوح منسُوب تھی مجھ سے

میرے ہونے نہ ہونے کی کیا شناخت رہی اب

نام اُس کا تھا ذات منسُوب تھی مجھ سے

کچھ درد کا حِصّہ اور خط میں لِپٹے آنسو

عُنوان اُس کا تھا داستان منسُوب تھی مجھ سے

خواہش کے سمندر میں ڈُوبی فقَط میری ہستی

شِکارہ اُس کا تھا لِہر منسُوب تھی مجھ سے

نہ چاہا کچھ سِواۓ چاہنے کی تِشنگی میں

جام اُس کا تھا خُماری منسُوب تھی مجھ سے

آنکھ میں چُبھتا پَل ٹِھہر گیا ڈَر سے شاید

فیصلہ اُس کا تھا خامِشی منسُوب تھی مجھ سے

بیداری ہو عشق میں تو بے زار ہو جاتی ہے لگن

خُدا اُس کا تھا عبادت منسُوب تھی مجھ سے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s