خِزاں

 

90AC9C33-FCC5-4DCC-9D75-EFAC2FFE784D

اب رات نہیں دن کے اُجالے ستاتے ہیں بُہت

کہِیں خزاں بنے تو بہاروں نے لُوٹا  کبھی

بارشوں کی نمی میں دُھل گۓ بِہتے بِہتے

کہِیں راستوں پہ بھٹکے دو مُسافر تو

کبھی منزلوں کا دل چاک کِیا خاک چھانتے چھانتے

ڈُوبے کئی بار خوشبوؤں کے بھنور میں تو کبھی

سُرخرو ہُوۓ اپنی ہی تھکی ہُوئی سانسوں میں بِہہ کر

مگر اب رات نہیں دن کے اُجالے ستاتے ہیں بُہت

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s