رُخصتِ طلب

IMG_1701

اوڑھ لِیا ہے تم کو اِک

چادر میں لِپٹے کفن کی

طرح اپنے تَن پہ کیونکہ اب

تم آس پاس دِکھائی تو دیتے نہیں

بس اِک یاد کی مانند دفن ہو میری

…مَیّت کے ساتھ

کُچھ سُہانے پَل کئی بِسری

مُسکراہٹیں رکھ لی ہیں میں نے

کُچھ رَنج کے آنسُو اور مُرجھاۓ

شِکوے تُمہارے نام کرتی ہُوں اِس

…اَذِیّت کے ساتھ

کبھی ٹکرا جاؤ غلطی سے تو

گُزر جانا کہ جیسے پہچانا نہیں

یا بے رُخی سے دیکھ لینا جیسے

کبھی جانا نہیں کیونکہ اب بس

اُس اُمید کو جلا دیا ہے اپنی

…شخصیّت کے ساتھ

نہ تھی بے وفا قسمت نہ ہی

وفادار چاہت نِکلی پھر وہ کیا

شے تھی جس کے رنگ میں بِکھر

گیا اُس کا اپنا رنگ اور بے رنگ

ہُوئی میری آشنائی اُس

…مِلاوٹ کے ساتھ

کچّے تھے مراسِم اور سیاہ

وصل کے دھُوپ چھاؤں کہ

ٹنگے رہے ضمیر کے ڈھیر تلے

نُورانی جسم اور اب تھک گیا

ہے بُت اِس سفر کی سُنسان سڑکوں

کی خاک چھانتے کہ اب رُوح کرتی

ہے رُخصت مُسافر کو سفر سے

…اِجازت کے ساتھ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s